The most difficult job is that of a private teacher.

The most difficult job is that of a private teacher.
I want to talk about the life of a private teacher. Working hours of private tutors.
From the time of assembly, the process of physical and mental destruction of the private teacher begins. Arrive fifteen minutes ahead of time so that the architects of the nation are already there to receive you. If you delay one minute, a circle will appear on the attendance register. And three such circles means a complete absence. This means Zionist justification for deducting a full day’s salary.
Get students out of class early in the morning. Then go to class with them in line. Stay together like a shadow (watchman) even during break time. You are a highly educated janitor. Even on vacation, from leaving the classroom to going out of the gate, it is the responsibility of a private teacher. All this is in addition to teaching (for which he is paid). Is. As if for free.
The real story of the private teacher’s oppression begins in the classroom. During a long period of teaching, I kept looking for such children (students). Who are angels. Are innocent.
Are cleansed of sins. There was hardly anyone like that.
Otherwise, the children in these English medium schools, God willing, were far ahead of the teachers in terms of their mental abilities, talents and “skills”. Be it fashion or the stories of famous characters in movies and dramas. Be it nude videos or comments on pornographic actresses. swear to God ! No teacher could reach the information, sense of humor and flirtation of these “angels”.
Belonging to the highly educated and high moral values ​​of the society, the young teachers were very much interested in imitation and ridicule of accent, dress, appearance and mannerisms.
Arrogance of belonging to big houses, eye to eye response to everything, fear of relationship with your parents’ senior positions and school administration, organizing classroom disorder to be smart and confident among your peers Promote in style,
In groups, try to destroy the classroom environment and encourage others to be active for it, make noises,
Entertaining others by making obscene remarks, carrying a cell phone in a group, instantly writing a false petition against your disliked teacher for not understanding a lesson or language, threatening to call your parents and then abusing yourself Complaining of the teacher’s reaction to,
Giving the teacher out of school and then slapping his classmates and saying, “Look? He used to be a great teacher, how could he get a holiday by telling Mama Papa ”. Explain to me which angels, what innocence ???. The reason for this is that the administration in charge of supervising the teachers
(Coordinator, Vice Principal or Principal) has also assigned the supervision of the teacher’s arrival and departure to the class, teaching methods or time spent to two or three students who continue to play with a teacher regardless of the facts. I also have a lot to say about the administration, i.e. the coordinator, vice principal or principal. There are many examples of these people. An example of this is in Pakistan. Who are laughing. And there are those Arabs who are seemingly very soft-spoken and elegant in speech and appearance, but in their behavior they are just as oppressive, cruel and deadly.
I would also like to use “Linde’s English” as an example. Those who have their appearance, dress, language and style belong to the British but from within they are the policemen of Punjab, or Chaudhry, the chiefs of Sindh or the feudal lords or tribal chiefs. All they care about is their job, the preservation of their chair, and the money for the organization. Obviously, when it comes, the job will continue and the salary will continue to be paid.

All the sweetness of their eyes and tongues is for the students and their parents and their every tactic and weapon is against the teachers. His motto is probably that students give money and teachers take money. So we benefit from those who give money and not from those who take it. I am not exaggerating in this. There is also an example of this. Every promise and smile of theirs is for the students and every bad news and trick is for the teachers.
They remain ignorant even after being aware of all the bad attitudes of the students, their good deeds and habits, their every immoral habit, while all the good deeds of the teachers, all their hard work, all their perfection are meaningless to them. If there is a teacher who brings a complaint, their answer is that that is why you have been hired. That’s all you have to do. Just avoid using both hands and tongue (ie, endure all the abuse, disorder and rudeness by being unarmed) and if a complaint comes from a student, a warning letter, a termination letter, an explanatory letter and don’t know which missiles are on the teachers. They always have time to fall.
They try their best to prevent the teacher or the director level from anything that could endanger our job before the teacher changes it as if one cup was broken in the kitchen and replaced with another. If you are wondering how they run their system by firing teachers, be aware that in their drawers are piles of CVs of well-educated young people who are looking for a job and often a replacement teacher. Even before the dismissal letter is handed over. There can be no greater manifestation of selfishness and hypocrisy. In order to take education to its highest standard, put the teacher under the workload like an animal so that no matter how hard he gets, his mission statement is. Sitting at home for hours in the evening for the whole week and then preparing daily lessons, preparing lesson activities, managing resources is robbing a private teacher even at that time which was for his family. Was out for shopping, hanging out with friends. No other job requires it. This is unfortunately the fate of a private teacher. For a private teacher, a day off is like Eid and a holiday evening is like a calf standing ready to be slaughtered at a butcher’s shop. My mission is to raise the voice of such teachers. And for that I will need your suggestions. May God be with you all.

سب سے مشکل ملازمت ایک پرائیویٹ ٹیچر کی ہے، ،،دل کو چھو لینے والی تحریر۔
مجھے بات کرنی ہے ایک پرایؤیٹ ٹیچر کی زندگی کی۔ پرائیویٹ اساتذہ کی نوکری کے اوقات کار ۔
اسمبلی کے وقت سے ہی پرائیویٹ ٹیچر کی جسمانی اور ذہنی بربادی کا سلسلہ شروع ہو جاتا ہے۔ خود وقت سے پندرہ منٹ پہلے پہنچو تاکہ قوم کے معماروں کا استقبال کرنے کےلئے پہلے سے موجود ہو ۔ایک منٹ تاخیر ہوئی تو حاضری رجسٹر پر دائرہ لگ جائے گا۔اور ایسے تین دائروں کا مطلب ایک مکمل غیر حاضری۔ مطلب ایک دن کی پوری تنخواہ کاٹ لینے کا صیہونی جواز۔
طلباءکو صبح سویرے کلاسوں سے باہر نکالو۔ پھر لائن میں ان کے ساتھ کلاسوں میں جاؤ۔ بریک ٹائم میں بھی سائے (چوکیدار ) کی طرح ساتھ رہو۔ ایک اعلیٰ تعلیم یافتہ چوکیدار ہی تو ہو تم۔چھٹی کے وقت بھی کلاسوں سے انخلاءسے لے کر گیٹ سے باہر جانے تک ذمہ داری ایک پرائیویٹ ٹیچر کی ہے۔یہ سب بھی تو وہ ہے جو پڑھانے(جس کی تنخواہ دی جاتی ہے) کے علاوہ ہے۔ گویا بلامعاوضہ ہے۔
پرائیویٹ استاد کی مظلومیت کی اصل داستان تو کلاس روم میں شروع ہوتی ہے۔ ایک طویل عرصہ معلمی کے دوران میں تو ایسے بچے (طلبہ) ڈھونڈتا ہی رہا۔ جو فرشتے ہوتے ہیں۔ معصوم ہوتے ہیں۔
گناہوں سے پاک ہوتے ہیں۔ شاید ہی کوئی ایسا تھا ۔
وگرنہ ان انگریزی میڈیم سکولوں میں تو پائے جانے والے بچے ما شاءاللہ اپنی ذہنی استعداد ، صلاحیتوں اور “ہنر “میں اساتذہ سے کئی ہاتھ آگے تھے۔فیشن کی باتیں ہوں یا فلموں اور ڈراموں کے مشہور کرداروں کے قصے۔ عریاں ویڈیوز کے مناظر ہوں یا فحش اداکاراؤں پر تبصرے۔ خدا کی قسم ! ان “فرشتوں”کی معلومات ،حس مزاح اور چھیڑ چھاڑ کوکبھی کوئی استاد نہ پہنچ سکا۔
معاشرے کے اعلیٰ تعلیم یافتہ اور اعلیٰ اخلاقی اقدار کے حامل گھرانوں سے تعلق رکھنے والے نونہال اساتذہ کے لب ولہجے ، ملبوسات ، شکل و صورت چال ڈھال کی نقالی اور تضحیک میں بڑے ہی تاک تھے۔
بڑ ے گھروں سے تعلق ہونے کا تکبر ، آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر ہر بات کا جواب دینا، اپنے والدین کے بڑے عہدوں اور سکول انتظامیہ سے تعلقات کا رعب جمانا ،اپنے ہم عصروں میں چالاک اور پر اعتماد مشہور ہونے کےلئے کلاس میں بدنظمی کو منظم انداز میں فروغ دینا،
گروپوں کی صورت میں کلاس روم کا ماحول تہس نہس کرنے کی تگ و دو کرنا اور دوسروں کو اس کےلئے متحرک رہنے کی ترغیب دینا، آوازیں نکالنا،
فحش گوئی کرکے دوسروں کو محظوظ کرنا، دھڑلے سے موبائل فون لے کرآنا ، جھٹ سے اپنے ناپسندیدہ استاد کے خلاف سبق یا زبان سمجھ نہ آنے کی جھوٹ موٹ درخواست لکھ دینا ، ماں باپ کو بلا کر لانے کی دھمکیاں دینا اور پھر اپنی ہی کسی بدسلوکی پر استاد کے ردعمل کی شکایت کر دینا ،
استاد کو سکول سے نکلوا تک دینا اور پھر ہم جماعتوں کے ہاتھوں پر ہاتھ مارتے ہوئے کہنا کہ “دیکھا ؟ بڑا ٹیچر بنا پھرتا تھا، کیسے چھٹی کروائی ماما پاپا سے کہہ کر” ۔ مجھے سمجھائے کون سے فرشتے ، کیسی معصومیت ؟؟؟۔ اس پر مستزاد یہ کہ اساتذہ کی نگرانی پر مامور انتظامیہ
(کوارڈینیٹر ، وائس پرنسپل یا پرنسل) نے استاد کی کلاس میں آمد اور روانگی ، پڑھانے کے طریقے یا گزارے گئے وقت کی نگرانی بھی دو تین طلباءہی کو سونپ رکھی ہوتی ہے جو حقائق سے قطع نظر کچھ بھی کھلواڑ کرتے رہیں ایک معلم کے ساتھ۔میرے پاس انتطامیہ یعنی کو ارڈینیٹر ،وائس پرنسپل یا پرنسل کے بارے میں بتانے کےلئے بھی بہت کچھ ہے۔ ان لوگوں کی کئی مثالیں ہیں۔ پاکستان میں ان کی ایک مثال ان کووں والی بھی ہے ۔ جو ہنس کی چال چل رہے ہوتے ہیں۔ اور ان عربوں والی بھی ہے جو بظاہر بولنے اور دکھنے میں بڑے نرم مزاج اور نفیس لیکن اپنے برتاؤ میں اتنے ہی جابر ، سفاک اور ہلاکو خان ہیں۔
ان کی مثال کےلئے میں “لنڈے کے انگریز ” بھی استعمال کرنا چاہوں گا ۔ جو اپنا ظاہر ، لباس ، زبان اور سٹائل تو انگریزوں والا رکھتے ہیں لیکن اندر سے وہی پنجاب کے پولیس والے، یا چودھری، سندھ کے وڈیرے یا جاگیردار یا قبائلی سردار۔ ان کا سروکار صرف اپنی نوکری ،اپنی کرسی کے بچاؤ ،اور ادارے کےلئے پیسے تک ہے۔جو ظاہر ہے آئے گا تو نوکری بھی لگی رہے گی اور تنخواہ بھی ملتی رہے گی۔
ان کی نگاہوں اور زبانوں کی سارا مٹھاس طلباءاور ان کے والدین کے لئے ہے اور ان کا ہر ہتھکنڈہ اور ہتھیار اساتذہ کے خلاف ہے۔ ان کا تکیہ کلام شاید یہی ہے کہ طلبا ءپیسے دیتے ہیں اور اساتذہ پیسے لیتے ہیں۔ تو ہمیں فائدہ پیسے دینے والوں سے ہے نہ کہ لینے والوں سے ۔یہ میں مبالغہ آرائی نہیں کررہا اس کی مثال بھی حاضر ہے۔ان کی ہر نوید اور مسکراہٹ طالب علموں کےلئے ہوتی ہے اور ہر بری خبر اور تیور اساتذہ کےلئے ۔
یہ طلباءکے سب برے رویوں ، ان کی اوچھی حرکات و سکنات ،ان کی ایک ایک غیر اخلاقی عادت سے باخبر رہ کر بھی انجان بنے رہتے ہیں جبکہ اساتذہ کی سب اچھائیاں ،ساری محنت ، ان کا سارا کمال ان کےلئے بے معنی ہے۔ان تک شکایت لے کر آنے والا کوئی استاد ہوتو ان کا جواب ہوتا ہے کہ اسی لیے آپ کو رکھا گیا ہے۔ یہی سب کچھ تو کرنا ہے آپ کو۔ بس ہاتھ اور زبان دونوں کے استعمال سے اجتناب کریں (یعنی غیر مسلح ہو کر ہر بدسلوکی، بد نظمی اور بدتمیزی سہتے آئیں) اور اگر شکایت کسی طالب علم سے آئے تو وارننگ لیٹر ٹرمینیشن لیٹر وضاحتی لیٹر اور پتہ نہیں کون کون سا میزائل اساتذہ پر گرانے کےلئے ان کے پاس ہمہ وقت موجود ہوتا ہے۔
ان کی حتیٰ الامکان کوشش ہوتی ہے کہ والدین یا ڈائریکٹر لیول تک کوئی بھی بات جس سے ہماری نوکری کو خطرہ ہو پہنچنے ہی نہ پائے اس سے پہلے ٹیچر بھلے اس طرح بدل لو جیسے کچن میں ایک کپ ٹوٹا اور اس کی جگہ دوسرا رکھ دیا۔ اگر آپ یہ سوچ رہے ہیں کہ اساتذہ کو نکال کر یہ اپنا سسٹم کیسے چلاتے ہیں تو یہ بھی جان رکھیے کہ ان کی دراز میں ملازمت کے خواہشمند پڑھے لکھے نوجوانوں کی سی ویز کے ڈھیر لگے ہوتے ہیں اور اکثر متبادل ٹیچر کا بندو بست پہلے والے کو برخاستگی کا لیٹر تھمانے سے بھی پہلے ہوجاتا ہے۔ خود غرضی اور منافقت کا ان سے بڑا کوئی مظہر نہیں ہو سکتا۔ تعلیم کو اپنے بلند ترین معیار تک لے جانے کےلئے حیوانوں کی طرح استا د کو کام کے بوجھ تلے لاد دو تاکہ اس کی کمر کا کڑاکا ہی کیون نہ نکل جائے ،ان کی مشن سٹیٹمنٹ ہے۔ گھر میں شام کو گھنٹوں بیٹھ کر پورے ہفتے اور پھر یومیہ اسباق کی تیاری ،اسباق کی سرگرمیوں کی تیاری ، ذرائع کا انتظام ایک پرائیویٹ ٹیچر کے اس وقت پر بھی ڈاکہ ڈال رہا ہے جو اس کے اہل خانہ کےلئے تھا۔شادی غمی میں شرکت ،دوستوں کے ساتھ گھومنے، خریداری کےلئے تھا۔ کو ئی اورنوکری اس کا تقاضا نہیں کرتی۔یہ کم بختی ایک پرائیویٹ ٹیچر ہی کا مقدر ہے۔ ایک پرائیویٹ ٹیچر کےلئے چھٹی کا دن عید کی طرح ہوتا ہے اور چھٹی کی شام قصاب کی دوکان پر ذبح ہونے کےلئے تیار کھڑے ایک بچھڑے کی طرح ہوتی ہے۔ایسے اساتذہ کی آواز بلند کرنا ہی میر ا مشن ہے۔ اور اس کےلئے مجھے آپکی تجاویز درکار ہوں گی۔خدا آپ سب کا حامی و ناصر ہو۔